Allama iqbal Poetry Best English | Shayari | Quotes 2021

Assalam-o- Alaikum Friends, Today We Talk About Allama Iqbal Poetry. Allama Iqbal is one of the best poets of urdu and national poet of Pakistan. We Offer the Best Collection Of Allama iqbal Poetry in English | Shayari | Quotes. Allama Iqbal latest Poetor In English Are Here. Allama iqbal Poetry An English Translations Collection of Allama Muhammad Iqbal’s most profound works and quotes. Here we have Dr. Allama Muhammad Iqbal Urdu poetry Collection for our viewers . Here You can see Allama Iqbal poetry , ghazals, poems, Shayari, messages.(Allama iqbal Poetry)

First Of All A Show You Some Poetry in English Of Allama Muhammad Iqbal.

Allama iqbal Poetry

Allama iqbal Poetry Best English | Shayari | Quotes.

ḳhudī ko kar buland itnā ki har taqdīr se pahle

ḳhudā bande se ḳhud pūchhe batā terī razā kyā hai

<———————–>

sitāroñ se aage jahāñ aur bhī haiñ

abhī ishq ke imtihāñ aur bhī haiñ

<———————–>

maanā ki terī diid ke qābil nahīñ huuñ maiñ

tū merā shauq dekh mirā intizār dekh

tire ishq kī intihā chāhtā huuñ

mirī sādgī dekh kyā chāhtā huuñ

<———————–>

tū shāhīñ hai parvāz hai kaam terā

tire sāmne āsmāñ aur bhī haiñ

<———————–>

hazāroñ saal nargis apnī be-nūrī pe rotī hai

baḌī mushkil se hotā hai chaman meñ dīda-var paidā

<———————–>

duniyā kī mahfiloñ se uktā gayā huuñ yā rab

kyā lutf anjuman kā jab dil hī bujh gayā ho

<———————–>

dil se jo baat nikaltī hai asar rakhtī hai

par nahīñ tāqat-e-parvāz magar rakhtī hai

<———————–>

Now I Will Show You Some Shayari Of Allama Iqbal

 

میں اپنی دوستی کو شہر میں رسوا نہیں کرتا
محبت میں بھی کرتا ھوں مگر چرچا نہیں کرتا

جو مجھ سے ملنے آجائۓ میں اسکا د ل خاد م ھوں
جو اٹھ کر جانا چاہے میں اسے روکا نہیں کرتا

جسے میں چھوڈ دیتا ھوں اسے پھر بھول جاتا ھوں
پھر اس ہستی کی جانب میں کبھی دیکھا نہیں کرتا

تیرا صرار سر آنکھوں پر کہ تم کو بھول جاؤں میں
میں کوشش کرکے دیکھوں گا مگر وعد ہ نہیں کرتا

<———————–>

لکھنا نہیں آتا تو میری جان پڑھا کر
ہو جایے گی تیری مشکل آسان پڑھا کر

پھنے کے لیے اگر تجھے کچھ نہ ملے تو
چہروں پے لکھے عنویں پڑھا کر

لاریب،تیری روح کو تسکین ملے گی
تو قرب کے لمہات میں قرآں پڑھا کر

آجاٰے گا تجھے اقبال جینے کا قرینہ
تو سرور کونیں کے فرماں پڑھا کر

<———————–>

زند گی انسان کی اک د م کے سوا کچھ نہیں
د م ہوا کے موج ہے،سوا کچھ نہیں

گل۔ تبسم کہ رہا تھا زند گانی کو مگر
شمع بولی۔ گر یہ غم کے سوا کچھ نہیں

راز ہستی راز ہے جب تک کوٰئ محرم نہ ہو
کھل گیا جس د م، تو مہرم کےسوا کچھ نہیں

زاذئران کعبہ سے اقبال یہ پوچھے کوئ
کیا حرم کا تحفہ زمزم کے سوا کچھ نہیں

<———————–>

زمانہ آیا ہے بے حجابی کا عام دیدار یار ہوگا
سکوت تھا پردہ دار جس کا وہ راز اب آشکار ہوگا

گزر گیا اب وہ دور ساقی کہ چھپ کے پیتے تھے پینے والے
بنے گا سارا جہان مے خانہ ہر کوئی بادہ خوار ہوگا

کبھی جو آوارۂ جنوں تھے وہ بستیوں میں آ بسیں گے
برہنہ پائی وہی رہے گی مگر نیا خار زار ہوگا

سنا دیا گوش منتظر کو حجاز کی خامشی نے آخر
جو عہد صحرائیوں سے باندھا گیا تھا پر استوار ہوگا

نکل کے صحرا سے جس نے روما کی سلطنت کو الٹ دیا تھا
سنا ہے یہ قدسیوں سے میں نے وہ شیر پھر ہوشیار ہوگا

کیا مرا تذکرہ جو ساقی نے بادہ خواروں کی انجمن میں
تو پیر مے خانہ سن کے کہنے لگا کہ منہ پھٹ ہے خار ہوگا

دیار مغرب کے رہنے والو خدا کی بستی دکاں نہیں ہے
کھرا ہے جسے تم سمجھ رہے ہو وہ اب زر کم عیار ہوگا

تمہاری تہذیب اپنے خنجر سے آپ ہی خودکشی کرے گی
جو شاخ نازک پہ آشیانہ بنے گا ناپائیدار ہوگا

سفینۂ برگ گل بنا لے گا قافلہ مور ناتواں کا
ہزار موجوں کی ہو کشاکش مگر یہ دریا سے پار ہوگا

چمن میں لالہ دکھاتا پھرتا ہے داغ اپنا کلی کلی کو
یہ جانتا ہے کہ اس دکھاوے سے دل جلوں میں شمار ہوگا

جو ایک تھا اے نگاہ تو نے ہزار کر کے ہمیں دکھایا
یہی اگر کیفیت ہے تیری تو پھر کسے اعتبار ہوگا

کہا جو قمری سے میں نے اک دن یہاں کے آزاد پاگل ہیں
تو غنچے کہنے لگے ہمارے چمن کا یہ رازدار ہوگا

خدا کے عاشق تو ہیں ہزاروں بنوں میں پھرتے ہیں مارے مارے
میں اس کا بندہ بنوں گا جس کو خدا کے بندوں سے پیار ہوگا

یہ رسم برہم فنا ہے اے دل گناہ ہے جنبش نظر بھی
رہے گی کیا آبرو ہماری جو تو یہاں بے قرار ہوگا

میں ظلمت شب میں لے کے نکلوں گا اپنے درماندہ کارواں کو
شہہ نشاں ہوگی آہ میری نفس مرا شعلہ بار ہوگا

نہیں ہے غیر از نمود کچھ بھی جو مدعا تیری زندگی کا
تو اک نفس میں جہاں سے مٹنا تجھے مثال شرار ہوگا

نہ پوچھ اقبال کا ٹھکانہ ابھی وہی کیفیت ہے اس کی
کہیں سر راہ گزار بیٹھا ستم کش انتظار ہوگا

<———————–>

گرچہ تو زنداني اسباب ہے
قلب کو ليکن ذرا آزاد رکھ

عقل کو تنقيد سے فرصت نہيں
عشق پر اعمال کي بنياد رکھ

اے مسلماں! ہر گھڑي پيش نظر
آيہ ‘لا يخلف الميعاد’ رکھ

يہ ‘لسان العصر’ کا پيغام ہے
“ان وعد اللہ حق” ياد رکھ”

 

Allama iqbal Quotes

People who have no hold over their process of thinking are likely to be ruined by liberty of thought. If thought is immature, liberty of thought becomes a method of converting men into animals.Allama iqbal Poetry

<———————–>

Nations are born in the hearts of poets, they prosper and die in the hands of politicians. Allama iqbal Poetry

<———————–>

Be not entangled in this world of days and nights; Thou hast another time and space as well.

<———————–>

The ultimate aim of the ego is not to see something, but to be something.

<———————–>

Words, without power, is mere philosophy. Allama iqbal Poetry

<———————–>

Islam is itself destiny and will not suffer destiny. Allama iqbal Poetry

<———————–>

But inner experience is only one source of human knowledge.Allama iqbal Poetry

<———————–>

Vision without power does bring moral elevation but cannot give a lasting culture.Allama iqbal Poetry

<———————–>

The wing of the Falcon brings to the king, the wing if the crow brings him to the cemetery.Allama iqbal Poetry

<———————–>

Be aware of your own worth, use all of your power to achieve it. Create an ocean from a dewdrop. Do not beg for light from the moon, obtain it from the spark within you.

People who have no hold over their process of thinking are likely to be ruined by liberty of thought. If thought is immature, liberty of thought becomes a method of converting men into animals.

Leave a Comment